جماعت اسلامی کے زیر اہتمام گمبیلا میں 5 فروری یوم یکجہتی کشمیر کے حوالے سے ریلی

98

ریلی سے جماعت اسلامی لکی مروت کے ضلعی امیر حاجی عزیز اللہ اور دیگر نے خطاب کیا۔

سرائے نورنگ(نمائندہ خصوصی)گلوبل ٹائمز میڈیا رپورٹ کے مطابق جماعت اسلامی پاکستان کے امیر سنیٹر سراج الحق کی کال پر جماعت اسلامی لکی مروت کے زیر اہتمام گمبیلا میں 5 فروری یوم یکجہتی کشمیر کے حوالے سے ریلی نکالی گئی۔ریلی سے جماعت اسلامی لکی مروت کے ضلعی امیر حاجی عزیزاللہ، جماعت اسلامی تحصیل نورنگ کے امیر مولانا سعداللہ حقانی،ضلعی نائب امیر حاجی عبدالصمد خان،صلعی نائب امیر مفتی عرفان اللہ، الخدمت فاونڈیشن کے صوبائی نائب صدر انجنیئراحسان اللہ،مولانامصطفی، اکرام اللہ،خان،ڈاکٹراحسان اللہ، پرنسپل عبدالقیوم خان، الخدمت فاونڈیشن لکی مروت کے سابق ضلعی صدر ملک امسازخان، نے خطاب کیا۔جب کہ اس موقع پر نجی تعلیمی ادارے کے طلباء نے بڑی تعداد میں شرکت کی ۔ شرکاء ریلی نے کشمیر کے حق اور ہندوستان مخالف نعرے بازی کی۔ مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا ہےکہ گذشتہ 70سالوں میں ایسی کوئی ظالم اور جابر حکومت بھارت میں نہیں آئی ‘ مودی حکومت آر ایس ایس نظریئے کو لیکر چل رہی ہےانہوں نے کہاکہ ہم یوم یکجہتی کشمیر کے موقع پر کشمیری عوام سے بھرپور یکجہتی کا اظہار کرتے ہیں آزادی مقبوضہ کشمیر کے عوام کا بنیادی حق ہے اور ہم آزادی کی اس جدوجہد میں کشمیری عوام کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں انسانی حقوق کے بین الاقوامی اداروں کی ذمہ داری ہے کہ وہ کشمیری عوام پر بھارتی ظلم و ستم کا نوٹس لیں اور کشمیری عوام کو ان کا حق خود ارادیت دلانے میں اپنا کردار ادا کرے خطے کا امن مسئلہ کشمیر کے حل سے وابستہ ہے اس کے بغیر دیرپا امن کا قیام ممکن ہی نہیں ہم آج کے دن مقبوضہ کشمیر کے عوام کی اخلاقی و سفارتی اور سیاسی سطح پر حمایت جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ کرتے ہیں جس طرح مقبوضہ کشمیر کے نہتے اور مظلوم عوام اپنی جدوجہد آزادی کے لیے بھارتی فوج کا مقابلہ کررہے ہیں انہوں نے مزید کہا کہ بھارت نے گزشتہ سات دہائیوں سے کشمیری عوام پر جس ظلم و ستم کا بازار گرم کر رکھا ہے وہ نہایت ہی قابل مذمت ہے کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کو دبانے کے لیے بھارت آئے روز نئے ہتھکنڈے استعمال کر رہا ہے تقریبا گزشتہ ڈیڑھ سال سے جس طرح یک طرف اور غیر قانونی اقدام کے ذریعے بھارت نے کشمیری عوام کا محاصرہ کر رکھا ہے وہ پوری بین الاقوامی برادری خصوصاً اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کے اداروں کے لیے لمحہ فکریہ ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ 5 فروری یوم یکجہتی کشمیر منانے کی قرارداد 1990میں جماعت اسلامی پاکستان کے سابق مرحوم امیر قاضی حسین احمد نے پیش کی گئی جو بینظیر بھٹو کی حکومت نے قاعدہ طورپر قانونی شکل دیدی انہوں نے کہا کہ 5 اگست 2019 کو بھارت نے اپنے آئین کے آرٹیکل 370 اور 35 اے کو ختم کر کے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کر دیا انہوں نے کہاکہ جماعت اسلامی اس کی بھرپور مذمت کرتی ہیں جلسے کے بعد کشمیر سے یکجہتی کے لئے انسانی ہاتھوں کی زنجیر بھی بنائی گئی۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: