چینی ٹیکنالوجی کمپنی’بیدو’ نے’ میٹاورس’ انڈسٹری میں قدم رکھ دیا

چینی ٹیکنالوجی کمپنی بیدو نے ‘ورچوئل رئیلٹی ایپ’ متعارف کرواتے ہوئے ‘ میٹاورس’ انڈسٹری کی دنیا میں قدم رکھ دیا ہے۔

بیدو نے نائیکی اور فیراری جیسے برانڈز کے ساتھ ورچوئل اشیا کے ساتھ تجربہ کرنے کابھی معاہدہ کیا ہےکیونکہ ماہرین کا خیال ہے کہ مستقبل میٹاورس کا ہی ہے جو کہ آج کی ویب کی جگہ لے سکتی ہے۔

بیدو جسے چین کا گوگل بھی کہا جاتا ہے نے ورچوئل دنیا کے اندر  اپنی نئی ایپ زی رینگ (XiRang) کے ذریعے ایک کانفرنس کا انعقاد کیا، ‘زی رینگ’ امید کی سرزمین کا چینی زبان میں ترجمہ ہے۔کانفرنس میں کسی اسمارٹ فون، کمپیوٹر  یا ورچوئل رئیلٹی چشموں کے ذریعے شرکت کی گئی۔

اس کانفرنس میں بیدو کے شریک بانی اور چیف ایگزیکٹو رابن لی تھری ڈی اوتاروں (تھری ڈی روپ) کی صورت میں موجود سامعین کے سامنے پیش ہوئے۔

بیدو کے نائب صدر مے جی نے صحافیوں کو بتایا کہ یہ پلیٹ فارم ابھی اپنی ابتدائی شکل میں ہے اور اسے مکمل طور پر متعارف کرانے میں 6 سال لگ سکتے ہیں۔

 زی رینگ ایپ صارفین کو ایک ڈیجیٹل کردار بنانے اور تھری ڈی دنیا میں (کسی فکشنل یا خیالی شہر میں) دوسرےصارفین  سے بات چیت کا موقع فراہم کرتا ہے۔

imshehzadahmad@

Leave A Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: